Wednesday, 22 April 2015

Heroes #1: Bill Craig

From time to time, I will be uploading tributes to the people who inspired my Christian faith and shaped my theological outlook. 

And to start this series, I can't think of anyone better than Dr. William Craig.




It was 2006 and I was just a novice in apologetics (still am). This was when I started watching Bill Craig's videos on YouTube.

What immediately caught my attention was his scholarly demeanor that fused seamlessly with a friendly persona that spoke directly to everyone listening to him.

A quick look the dr.'s C.V.:
  • Wheaton College — B. A. Communications, high honors
  • 1971
  • Trinity Evangelical Divinity School — M. A. Philosophy of Religion, summa cum laude
  • 1975
  • Trinity Evangelical Divinity School — M. A. Church History, summa cum laude
  • 1975
  • University of Birmingham, England — Ph.D. Philosophy
  • 1977
  • Universität München, Germany — D. Theol. Theology
  • 1984

















Despite having a rich academic background, he makes it a point to cater to the needs of people outside the academia as well. 



He is especially famous for his debates against atheists. Along with distinguished academics, he also debated the late British journalist, Christopher Hitchens.


Christopher Hitchens, who had become an icon of sorts in his life, was asked by someone before the debate: "Is today's debate David vs. Goliath?"

Hitchens replied in the negative, saying that it was instead "Goliath vs. Goliath"!



Lessons I Learned from Dr. Craig:



  • Always have a sense of humor   


I am assuming that half of the atheists that turn up at his debates and lectures assume him to be yet another fundamentalist who will simply preach, and shout back when criticized. But I have never seen Dr. Craig even flinch at the most critical statement against his faith.

Is God a Computer? Watch video


  • Serving the Local Church

Dr. Craig is nothing short of a celebrity in the Christian world, yet he still serves his local congregation by teaching an adult Sunday School class. If outside his hometown, he will fly back home Saturday night, and if a trip is coming up, he will delay his Sunday flights until after the class. That is simply amazing.

  • Admitting your Failures
Dr. Craig is one person I know who has openly talked about professional failure and how to deal with it. This shows his practical outlook on faith.

Watch Video: What is the Meaning of Failure for a Christian?


  • Always be Humble
Despite having a Masters in Divinity and a PhD. in theology, Dr. Craig has gone on record to claim that he is still correcting his theology. Compare this with Christian leaders who don't even have half his qualifications but speak as if they have figured it all out, right down to the last detail. 

  • Discipline
Craig has Charcot-Marie-Tooth syndrome, a rare neuromuscular diseases. He can't even type. Despite all this, his productivity is second to none. The reason is his disciplined lifestyle, which you can read about here.

  • Having a True Passion for Christ
This is the greatest lesson I have learned from Bill. All the degrees, academic fellowships, books, journals, and media appearances haven't taken away his passion for Christ, whom he accepted as Lord and Savior in his teens. Despite basing his theistic arguments on science and philosophy, Bill never fails to remind people that they can experience God personally in their lives and find true peace and happiness. 

Learn more about him at: ReasonableFaith

Sunday, 19 April 2015

Christianity & Islam: Similarities and Differences


A reply to the “13 VALID REASONS WHY AND HOW MUSLIMS ARE MORE TRUE FOLLOWERS OF JESUS (PBUH) THAN MOST CHRISTIANS BELIEVE” By Luis Abdul Kareem Colón.


I was given these reasons by a Muslim friend and felt it as my duty to give a reasoned reply. It is about time I uploaded it.

Note that I wrote this piece in 2011, so many of the arguments may appear unpolished...

1: Jesus (pbuh) taught that there is only One God and Only God should be worshiped as taught in Deut 6:4, Mark 12:29. Muslims also believe this as taught in the Qur'an verse 4:171.



Ans: I did not get the point of this statement, as even Christians are monotheists. We also believe in One God. I think the misunderstanding arises from the verse of the Qur’an mentioned above which mixes the belief in Trinity as something contrary to monotheism. In reality, Trinitarian beliefs affirm the Oneness of God. That we worship three Gods is an unbiblical and unhistorical myth. For example, the 8th century Athanasian Creed says:

We worship One God in Trinity and Trinity in Unity; neither confounding the Persons: nor dividing the substance”[1]

The concept of Trinity simply states that God is one being who exists as three Persons, the Father, Son and the Holy Spirit, each of whom is clearly shown Divine in the Scriptures.


Moreover, our Muslims friends do not realize that Jesus did not use the name “Allah” in verses mentioned above. Rather he used the names “YHWH” and “Adonai”, both names never appearing in the Qur’an for God. At least from a linguistic and historical point of view, they simply cannot be worshiping the same God as Jesus.

Moreover, Jesus applied both these names to Himself on several occasions (Matthew 22:45, John 8:58 etc). So the argument that Muslims and Christians are worshiping the same God does not hold any water.

2. Jesus (pbuh) didn't eat pork as taught in Leviticus 11:7, and neither do Muslims as taught in the Qur'an verse 6:145.


Ans: This is true. Jesus, while on earth was completely obedient to the dietary laws of the Torah. However, what Christians understand is that this submission to law was related to Him being the complete sacrifice for our sins. 

The Bible says that all men are sinners, and we need to obey the law to the fullest without breaking in it in order to escape God’s wrath. Since no man can do this, God Himself came down in the person of Jesus to do this for us. He fulfilled the law and became a substitute for us and His righteousness was imputed upon us (2 Corinthians 5:21). 

This is why Jesus fulfilled the law, but He made it clear that salvation for His followers come only as a result of His sacrifice (Matthew 26:27-28).


As regards to food laws, Jesus made it really clear by saying:

 What goes into someone’s mouth does not defile them, but what comes out of their mouth that is what defiles them.” “Are you still so dull?” Jesus asked them. “Don’t you see that whatever enters the mouth goes into the stomach and then out of the body? (Matthew 15:11, 16-17)

This became the basis of freedom from these communal laws for the early Christian community (Acts 10:15, Romans 14:1-4). What we are commanded however to do is not to offend anyone by what we eat.

If someone doesn't consume pork, a Christian is obliged by the teachings of the New Testament not to make him/her eat and even try to avoid in their presence. Once again, there is no real following of Jesus on the part of Muslims. Come to think of it, Islam is putting those rules back one which Jesus Himself relaxed.
  

3. Jesus (pbuh) greeted with the words "as salaamu alaikum" (Peace be with you) in John 20:21. Muslims also greet each other this way



Ans: Agreed, Jesus did greet His disciples in this way. So what? Even Christians wish peace to each other (Romans 1:7 etc). In fact, Muslims even send “peace” on Jesus Himself when they say “peace be upon him”. No where in the Bible did Jesus command His followers to do that. 

He Himself is the Prince of Peace (Isaiah 9:6) who gives us true peace (John 14:27). These themes are completely absent from the Jesus of the Qur’an. Not to mention, this statement which Muslims are pointing towards was made by the resurrected Jesus....



4. Jesus (pbuh) always said "God Willing" (inshallah), Muslims say this too before doing anything as taught in the Qur'an verses 18:23-24.

Ans: I would have appreciated if the writer of the paper had shown any instance where Jesus said “inshallah”.

5. Jesus (pbuh) washed his face, hands, and feet before praying. The Muslims do the same. 


Ans: Jesus did that because he was a Jew! Even Jews do that. Are they also close to Jesus?? Moreover, even we don’t jump in mud and then go to Church. It is natural that if anyone is doing something he/she considers sacred, one would definitely clean up.

This doesn't prove that Muslims are closer to Jesus than Christians. Moreover, read the passage of Matthew 15 quoted above in question 2 and see what Jesus said about ritual cleansing.

6. Jesus (pbuh) and other prophets of the Bible prayed with their head to the ground (see Matthew 26:39). Muslims do too as taught in the Qur'an verse 3:43.


Ans: Again, does this prove that Muslims follow Jesus more than Christians? Haven’t you seen in Bible where the disciples of Jesus bowed down and worshiped Him?  (Matthew 2:11, 28:17-18). Why don’t Muslims do this?

Moreover, check out what Jesus said about praying (Matthew 6: 5-13). Do Muslims pray in secret? Most importantly, do they call God their Father? One occasion, Jesus asked His disciples to ask for anything in HIS Name (John 16:24) Why don’t Muslims follow this as well?

7. Jesus (pbuh) had a beard and wore a throbe. It is Sunnah for Muslim men to grow beards and dress modestly.


Ans: Again, neither the Bible nor the Qur’an says that Jesus had a beard and wore a robe. This image comes from art works and movies. So what’s the point here?

 8. Jesus (pbuh) followed the law and believed in all the prophets, (see Matthew 5:17). Muslims do too as taught in the Qur'an verses 3:84 and 2:285.


Ans: The Muslims are inconsistent on this point. They are taught from their childhood that the Law and the Prophets have been corrupted, whereas Jesus said that they will sustain till the heavens and earth pass away. Jesus did not talk about a superficial belief as Muslims have. Read the text, He really meant what He said. Unless Muslims believe in the authenticity and authority of the Law and the Prophets, they are not close to Jesus at all.

9. Jesus' mother Maryam (pbuh) dressed modestly by fully covering her body and wearing a headscarf (hijab) as found in 1 Timothy 2:9, Genesis 24:64-65, and Corinthians 11:6. Muslim women modestly dress the same as taught in the Qur'an verse 33:59. 


Ans: Indeed, no Christian woman would deny that the Bible declares to dress modestly. But John Stott[3] explains that it is the inward attitude that matters. And indeed, keeping the text from Matthew 15 at hand, Jesus would have said the very same thing. He stressed on inward piety than outward displays. 

The reason for dressing modestly was to show the authority of the husband. The verses mentioned here are contextual. The moral law remains, that is that women should be obedient to their husbands, but how to dress modestly is a cultural thing. 

10. Jesus (pbuh) and other prophets of the Bible fasted up to 40 days (see Exodus 34:28, Daniel 10:2-6. 1Kings 19:8, and Matthew 4:1-11. Muslims do also during the month of Ramadan. Muslims are required to fast the full obligatory 30 days (see Qur'an 2:183), and others take it a step further by fasting an additional 6 days to increase their rewards.


Ans: In purely historical terms, Islamic fasting is just another version of the Jewish and Sabean Fasting[4]. Moreover, remember what I wrote about why Jesus followed the Law? Islam doesn't talk about it, so I don’t think Muslims should use this as an argument. To really cut to the core, let us examine what Jesus said about fasting:

  16 “When you fast, do not look somber as the hypocrites do, for they disfigure their faces to show others they are fasting. Truly I tell you, they have received their reward in full. 17 but when you fast, put oil on your head and wash your face, 18 so that it will not be obvious to others that you are fasting, but only to your Father, who is unseen; and your Father, who sees what is done in secret, will reward you. (Matthew 6)

Show me one verse from the Qur’an which has these rules for fasting. I live in an Islamic country and when Ramadan comes, the work hours are cut down. This is not what Jesus said in regards to fasting. Again, the similarity exists only on the surface. When you dig deep, nothing can be further from the truth. 

11. Jesus (pbuh) taught to say "Peace to this house" when entering it (see Luke 10:5), and to also greet the people in the house with "peace be unto you". Muslims do exactly what Jesus did and taught. When we enter our homes and the homes of others we say "Bismillah" and also greet with "as salaamu alaikum" (peace be upon you) as taught in the Qur'an verse 24:61.


Ans: The context not at all promotes the practice of saying Bismillah every time you enter the house. These are instructions for missionaries and Evangelists who go to towns and cities to preach the Gospel and heal people. But then again, do Muslims believe in the peace which the Bible talks about, the one that Jesus Himself gives?

12. Jesus (pbuh) was circumcised. Circumcision is 1 of the 5 fitrah in Islam, so Muslim men are required to be circumcised. According to the Bible in Luke 2:21, Jesus was eight days old when he was circumcised. In the Torah, Allah/God stated to the Prophet Abraham (pbuh) that it is an "Everlasting covenant" (see Genesis 17:13). In the Qur'an verse 16:123 Muslims are required to follow the religion of Abraham. The Prophet Muhammad (saws) said, "The Prophet Abraham circumcised himself when he was eighty years old." (See Sahih hadith Bukhari, Muslim, and Ahmad).


Ans: I think I have made it thoroughly clear why Jesus followed the Law and Islam does not understand Jesus’ obedience in those terms. So again, a vague attempt to make Islam look like a religion practiced by Jesus. There is not a single verse where Jesus talks about circumcision as a mandatory practice, even in the Qur’an!

13. Jesus (pbuh) spoke Aramaic and called God "Elah", which is pronounced the same as "Allah". Aramaic is an ancient, Biblical language. It is one of the Semitic languages that also include Hebrew, Arabic, Ethiopic and the ancient Assyrian and Babylonian language of Acadians. The Aramaic "Elah" and the Arabic "Allah" are the same. The Aramaic "Elah" is derived from the Arabic "Allah", and it means "GOD". "Allah" in Arabic also means "GOD", the Supreme GOD Almighty. You can easily see the similarity in their pronunciation so this concludes that the God of Jesus is also the God of the Muslims, of all mankind, and all that exist, Ameen! 


Ans: Again, this is a superficial similarity which doesn't prove anything. The root “El” was even used by pagan nations contemporary to Abraham. And it is a documented fact that for the pagans of Mecca at the time of the Prophet Mohammad (P.B.U.H), Allah was just a high God among the pantheon of other gods they worshiped[5].

So are the pagans also close to Jesus because some names sound similar? Moreover, the God of Christianity is the Heavenly Father whereas among the 99 names of Allah, not one is Father. Moreover, Jesus claimed Divinity for Himself in the Bible alongside the Father in a Tri-Unity], which Islam denies as a blasphemy. So even this arguments fails.

Over and over again we see there are fundamental differences among what Jesus said in the Bible and the teachings of Islam. Let me list down a few more differences which will resolve this debate for good.



  • Jesus predicted his own death and resurrection( Luke 24:44-46) whereas Islam denies it completely (4:157)
 
  • Jesus said it was His blood that would be the source of the forgiveness of our sins (Matthew 26:28, Mark 10:35), whereas the Qur’an denies any such sacrifice.
 
  • In the Bible, Jesus proclaimed that He was the Son of God (Matthew 26:64) whereas in the Qur’an, it is completely denied (Sura 5:116, 9:30)
 
  • Jesus claimed to finish God’s plan of salvation for mankind in His own person(Matthew 21:37, John 19:30), whereas Islam insists that it is the Prophet Mohammad (P.B.U.H.) who did so (33:40).




References: 


[1] Know the Truth- Bruce Milne pages 76-77


[3] Understanding the Bible (1984)-John Stott page 174

[4] Sources of Islam- Rev John C Blair Page 139

[5] Ibid pages 22-23, Muhammad- The prophet for our time –Karen Armstrong page 40

[6] Sura 53:19-21

[7] Matthew 11:27, John 10:30-33, John 5:23-25 among others

Further Reading:


Also read my review of a trending Muslim-Christian debate here

Join this blog to get free updates by email. Also LIKE my Facebook page to get all the latest blog posts on your social media.


Tuesday, 14 April 2015

تثلیث کا عقیدہ: تعارف اور اعتراضات پر ایک نظر

 We worship one God in Trinity, and Trinity in unity; neither confounding the person, nor dividing the substance. (Athanasian Creed)


Let there be the three persons in one substance, power, and eternity ; God the Father, God the Son, and God the Holy Spirit. (catholic creed)
جیسا کہ ہم نے دیکھا تثلیث کے عقیدے کو ابتدائی کلیسیاء نے مجمل طور پر بیان کردیا ہے. لہٰذا دائرہ مسیحیت میں اس پر کوئی شک و شبہات کی گنجائش نہیں بچتی. لیکن چند حلقہ اسے بھی ہیں جو خود کو مسیحیت سے تو وابسطہ کرتے ہیں لیکن اس نظریے کو رد کرتے ہیں. اور ہمارے مسلمان بھائی تو مکمل طور پر تثلیث یا عقیدہِ تثلیث کی نفی کرتے ہیں. کیا یہ اعتراضات بجا ہیں؟ آئیے غور کرتے ہیں.

عقیدے کو سمجھنے میں دشواریاں :-

لسانی حدود :- لفظ (Persons) عام طور پر غلط فہمی کو جنم دیتا ہے کہ خدا بھی انسانوں جیسی شخصیت رکھتا ہے.
  • لفظ خدا کا  بائبل میں :- لفظ خدا کا استعمال بائبل میں مختلف طریقوں سے ہوا ہے  . مثال کے طور پر. یوحنا ٢:٣ میں لفظ خدا کو تثلیث کے معنوں میں استعمال نہیں کیا گیا جبکہ اسی باب کی سولہویں آیت میں کیا گیا ہے.
  • ہمارے فطری اور طبعی تجربے میں ہمیں اسی کوئی مسسل نہیں ملتی جس سے ہم عقیدہِ تثلیث کو مکمل طور پر سمجھا سکھیں.

عقیدے کی اہمیت :-

ہم نے دیکھا کہ عقیدہِ تثلیث کو سمجھنے میں کچھ پیچیدگیاں سامنے آتی ہیں. لیکن اس نظریے کی اہمیت سے بھی انکار نہیں کیا جاسکتا. آپ دیکھیں کہ نجات کے ساتھ ساتھ تثلیث کیتھولک، آرتھوڈوکس اور پروٹسٹنٹ کلیسیاء کا بنیادی عقیدہ ہے. باپ بیٹا اور روح القدس کو تسلیم کئے بغیر کوئی شخص بپتسمہ نہیں لے سکتا. یعنی مسیحیت میں داخل نہیں ہوسکتا. تثلیث ہماری دعاؤں، مناجات اور حمدوثنا اور نجات کا مرکزی جز ہے.
کیونکہ بطور مسیحی ہم عقیدہِ تثلیث کو انکار نہیں کرسکتے تو آئیے ہم چند اعتراضات پر روشنی ڈالتے ہیں جو اس کی نفی من ہمارے سامنے پیش کئے جاتے ہیں


   

پہلا اعتراض :مسیح نے یہ کبھی دعویٰ نہیں کیا کہ میں خدا ہوں. اس بات میں قطعاً سچائی موجود نہیں. بائبل میں مسیح کے بےشمار قول ہیں جنہیں بلاشبہ شرک کے زمرے میں لیا جاسکتا ہے. دیکھئے یوحنا ٥٨:٨. جس کا اور کوئی مطلب نہیں بنتا سواۓ اس کے کہ مسیح اپنے آپ کو اس ذات سے منسوب کررہے ہیں جس نے کوہِ طور پر موسیٰ پر خود کو منکشف کیا. ہم ایسے دلائل کا ایک انبار لگا سکتے ہیں. لیکن ایک آیت کافی ہے. جب ایسی آیات سے ناقدین دوچار ہوتے ہیں تو وہ لوگ کچھ اس طرح کی باتیں کرتے ہیں، یہ تو یوحنا نے لکھا ہے ہمیں وہ دیکھایۓ جو مسیح نے لکھا ہے. یا پھر وہ بائبل کی صداقت کو سرے سے ہی رد کردیتے ہیں.


اب ذرا غور فرمائیے کہ بات کیا ہوئی ہے. تنقید کرنے والا لاشعوری طور پر اس بات کو تسلیم کررہا ہے کہ ایسی آیت ضرور موجود ہیں جن میں مسیح اپنی الوہیت کو بیان فرماتے ہیں. لیکن اب وہ ان کی بنیاد پر اعتراضات کی بوچھاڑ کررہا ہے کہ جناب بائبل تو بدل چکی ہے دراصل اس نے خود بحث کا عنوان تبدیل کردیا ہے بات ہورہی تھی کہ مسیح نے دعویٰ نہیں کیا. لیکن اب بائبل کی صداقت پر بات آگئی ہے.


 تو جناب جب آپکو بائبل ہی پر بھروسہ نہیں تو اس میں سے سوالات اٹھانے کی تُک کیا ہوئی؟ ہماری ناقص راۓ میں تثلیث کو رد کرنے کے لئے پہلے بائبل کو رد کرنا ضروری ہے لہٰذا اعتراض کرنے والوں کو پہلے اس بات پر بحث کرنی چاہیے کہ آیا بائبل ایک مستند ہے یا نہیں. اور جو پہلے ہی اس کی صداقت کو تسلیم کرتا ہے اس کے پاس عقیدہِ تثلیث کو رد 

کرنے کا کوئی جواز موجود نہیں.

  • دوسرا اعترض یہ ہے کہ اس نے اپنی الوہیت کو سرے سے رد کردیا. اس اعتراض کو "ثابت" کرنے کے لئے جو مرکزی آیت استعمال کی جاتی ہے وہ مرقس ٣٢:٣ ہے. جہاں مسیح فرماتے ہیں کہ اس دن کی بابت کوئی نہیں جانتا نہ آسمان کے فرشتے نہ بیٹا مگر صرف باپ.

اعتراض کرنے والا کہتا ہے کہ مسیح نہ صرف اپنے باپ کو خدا سے جدا کرہے ہیں بلکہ اپنے علیمِ کل ہونے کی بھی نفی کررہے ہیں، کیونکہ وہ کہتے ہیں کہ انہیں قیامت کے دن کا مجھے معلوم نہیں. ہم اس بحث میں نہیں جاتے کہ اس آیت کی درست تفسیر کیا ہے یا پھر عقیدہِ تثلیث یہ آیت مسیح کی فطرت اور اس کے باپ کے ساتھ رشتے کو کس طرح بیان کرتی ہے.ہم صرف آپکی سہولت کے لئے اس بات کو تسلیم کرلیتے ہیں کہ یہاں مسیح نے اپنی الوہیت کا انکار کیا ہے.

لیکن ایسا کرنے میں بھی انہوں نے خود کو مخلوقِ خداوندی یعنی بنی نوع انسان، اور ملائکہ سے خود کو بالاتر کیا ہے. اگر وہ صرف انسان ہے (جیسا ہمارے کچھ دوست سمجھتے ہیں) یا وہ صرف فرشتہ ہے (جیسے ہمارے کچھ اور دوست ایسا سوچتے ہیں) تو وہ خود کو الگ نہ کرتا. اگر آپ کو ہماری تشریح پر اعتراض ہے تو اپ متی ٣٣:٢١ کو پڑھیں. جہاں مسیح ایک  سناتے ہیں جس میں ایک مالک (یعنی خدا) چند ٹھیکےدار (یعنی بنی اسرائیل) اور نوکر (یعنی انبیاء اکرم). اس کہانی میں وہ ایک چوتھا کردار لاتے ہیں جوکہ اس مالک کے بیٹے کا ہوتا ہے اور مفہوم سے صاف ظاہر ہے کہ وہ اپنی طرف ہی اشارہ کرہے ہے. چلیں من لیا کہ وہ خدا نہیں تو پھر وہ عام انسانوں اور نبیوں میں سے بھی نہیں.
مسیح کی اپنے بارے میں اس شناخت کا کامل اظہار متی ٢٧:١١ میں ہوتا ہے جہاں وہ کہتے ہیں "کوئی بیٹے کو نہیں جانتا سواۓ باپ کے. اور کوئی باپ کو نہیں جانتا سواۓ بیٹے کے. اور اس کے جس پر بیٹا اسے ظاہر کرنا چاہے." اس آیت پر کوئی یہ اعتراض بھی نہیں کرسکتا کہ یہ کلیسیاء نے گھڑی ہے کیونکہ یہاں لکھا ہے کہ کوئی بیٹے کو نہیں جانتا.

اگر وہ خدا نہیں تو کم از کم بنی نوع انسان اور آسمانی مخلوقات سے زیادہ خدا کے ساتھ قربت رکھتا ہے. یا یوں کہہ لیں کہ اس کائنات میں مسیح کا درجہ صرف خدا سے کم ہے! 

روح القدس کون ہے؟
نیا عہد نامہ اور خصوصی طور پر مسیح کے قول اور احوال کا مطالعہ کرتے ہوئے ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ یہ کتابیں بنیادی طور پر یہودیوں نے لکھی ہیں. یہودی ایک خدا کو ماننے والے اور شرک سے باز رہنے والے لوگ ہیں. وہ نہ تو خدا کا نام لیتے ہیں اور نہ اس کے ساتھ  انسان کو منسوب کرتے ہیں.

 تو ایسا کیا ہوا کہ وہ مسیح کوسجدہ کرنے پر ہوگے. یوحنا کہتا ہے کہ ہم نے اس کا جلال دیکھا اور ظاہر ہے کہ جلال سے ان کے معنی وہ سارے واقعات ہیں جن میں خدا نے خود کو قوم بنی اسرائیل پر ظاہر کیا. وہ لکھتے ہیں کہ ہم نے اس کا "ویسا" ہی جلال دیکھا. لیکن مسیح کچھ ہی عرصے میں اپنے ان ماننے والوں سے جدا ہوگئے. تو وہ ایسی کونسی قوت ہے جو دو ہزار سال سے مسیح کو اس کی کلیساء میں زندہ رکھے ہوئے ہے؟ ہمیں مسیح نظر نہیں آتے لیکن ان کا ہر پیروکار اُن کو اپنے ساتھ موجود پاتا ہے. چونکہ ہم اس قوت کو دیکھ نہیں سکتے لہٰذا ہم اسے روح کہتے ہیں.    

حاصل کلام :-
ان باتوں کو مدِ نظر رکھا جائے تو بائبل کے تصورِ خدا کو عقیدہِ تثلیث سے زیادہ مجمل انداز میں کوئی پیش نہیں کرتا. آپ اس پر اعتراض کرسکتے ہیں لیکن اگر اپ بائبل کو دیانتداری سے پڑھیں تو یہ ان تمام عقائد سے جن میں مسیح کو صرف انسان صرف فرشتہ یا صرف نبی کہا گیا ہے بالاتر ہے. 
    

Sunday, 12 April 2015

مسیحیت کیا ہے؟

دنیا میں بہت سے مذاہب موجود ہیں, جن میں سے بہت سے  تاریخ کا  حصّہ  بن کر رہ گئے. جب بھی بات آ تی  ہے مسیحیت کی تو بےشمار لوگ اسے بھی محض ایک اور مذہب تصور کرلیتے ہیں.مسیحیت دنیا کے مذھب میں کیسے منفرد ہے؟ یہ ایک الگ بحث ہے. پہلے ہمیں اس بات  کا تحیہ کرنا پڑےگا کہ مسیحیت ہے کیا؟ اس سوال کا جواب دینے کے بہت سے طریقے ہیں. اس مضمون میں ہم مشہور زمانہ بھارتی فلم PK کو بنیاد بناتے ہوئے یہ جاننے کی کوشش کریں گے کہ آخر کار مسیحی حضرات کے مرکزی عقائد کونسے ہیں.

ویسے تو یہ فلم روایتی مذہب کی دھجیاں اڑاتی ہی نظر آتی ہے لیکن انجانے میں اس فلم کے بنانے والوں نے ہمیں اپنے عقائد پر نظرثانی کا موقع فراہم کیا ہے. اور اُنہیں سمجھنے کے لئے آسانیاں پیدا کیں ہیں. مندرجہ بالا سطور میں ہم اس فلم کے اُن   

ڈائلگز کا جایزہ لینگے جس میں PK مسیحیوں سے مخاطب ہوتا ہوا نظر آتا ہے.

خدا کی موت :-
PK جب چرچ میں داخل ہوتا ہے تو اُس کلیسیاء کے دو افراد اُسے یہ کہ کر باہر نکال دیتے ہیں کہ بھگوان تمہارے لئے سولی چڑھ گیا. اس پر وہ تعجب کا اظہار کرتے ہوئے پوچھتا ہے کہ "گاڈ کو لٹکادیا" یعنی جس ہستی کی وہ تلاش کررہا تھا مر چکی ہے.
یہ بات بنیادی طور پر تو درست ہے کہ خدا ہمارے لئے سولی پر چڑھا. لیکن بغیر وضاحت کے یہ بات تھوڑی سی معیوب لگتی ہے بیشک ہم مسیح کو خدا مانتے ہیں اور اس کی عبادت کرتے ہیں لیکن اس بات کی گہرائی میں جانے سے پہلے ہمیں مسیحی تصورِخدا کو جاننے کی ضرورت ہے ہم لوگ خداِ ثالوث کو مانتے ہیں یعنی ایک مقدس ذات جو اپنے اندر تین شخصیت کا مجموعہ ہے یعنی باپ بیٹا اور روح القدس. لیکن ہم یہ بھی مانتے ہیں کہ تثلیث کا دوسرا قنوم مسیح یسوع سے تجسد اختیار کیا. اور اسی طرح سے وہ دو فطرتوں کا مالک ہے یعنی کامل الوہیت اور کامل بشریت بھی. (فلپیوں ٥:٢ تا ١١) یہ کامل بشر یسوع تھا جو سولی پر لٹکا. باپ نہیں اور نہ ہی روح القدس صرف بیٹا. اور یہ بھی یاد رکھیں کہ وہ محض سولی پر لٹکا ہی نہیں رہا اور نہ ہی قبر میں دفن رہا. بلکہ اپنے وعدہ کے عین مطابق تیسرے دن مردوں میں سے جی اٹھا.

کیا خدا WINE پیتا ہے؟
PK دیکھتا ہے کہ کاهن سنہری پیالے کو یسوع کے مجسمے کے سامنے پیش کرتا ہے اور پھر کلیسیاء کو پیش کرتا ہے PK اس کو "لوٹا" کہہ کر پوچھتا ہے کہ اس میں کیا ہے؟ جواب ملتا ہے WINE.
PK سمجھتا ہے ناریل پانی سے WINE زیادہ مہنگی ہوتی ہے شاید اسی لئے خدا کو پسند آتی ہے! ظاہر سی بات ہے کہ یہ ایک مزاقیہ بات تھی لیکن وضاحت کے لئے بتادیا جائے وائن خدا کو پیش نہیں کی جارہی بلکہ حقیقت اس کے برعکس ہے.
یہودی فسح کی عید مناتے تھے یہ اس رات کی یادگاری تھی جب خدا اُنہیں ملکِ مصر سے فرعون کی غلامی سے نکال کر لایا. اس موقع پر وہ روٹی سگ پاتھ، قربانی کا گوشت اور مے نوش فرماتے تھے.جب مسیح نے یہی عید اپنے شاگردوں کے ساتھ منائی "تو اس نے روٹی لی اور برکت دی اور توڑی اور شاگردوں کو دے کر کہا لو کھاؤ یہ میرا بدن ہے پھر پیالہ لے کر شکر کیا اور اُنہیں دے کر کہا کہ تم سب اس میں سے پیو کیونکہ نۓ عہد کا میرا خون ہے جو بتہیروں کی خاطر گناہوں کی معافی کے لئے بہایا."
لہٰذا جو مے اور روٹی مذبح سے پیش کی جاتی ہے وہ بھی مسیح کی اُس عظیم قربانی کی یادگاری ہے جو اُس نے سولی پر لٹک کر ہمارے لئے دی.

مخصوص کپڑے؟
PK اس بات کو لے کر بہت پریشان ہوتا ہے مسلم ہندو اور کرسچن خواتین مختلف مواقعوں پر مختلف طرح کے ملبوسات کیوں زیبِ تن کرتی ہیں. ایک طرف بیوہ سفید  پہن رہی ہے اور دوسری طرف نئی نویلی دلہن بھی سفید کپڑے پہن رہی ہے یہ  کیا ہے؟ دراصل یہ اُسی غلط فہمی کا نتیجہ ہے کہ مسیحیوں کے تہواروں کے کوئی  لباس ہوتے ہیں جو مذہبی اہمیت کے حامل ہیں، ایسی کوئی بات نہیں ہے بلکہ لباس کا چناؤ ثقافتی مسلہ ہے.

کفایت الکفارہِ المسیح 
PK سے جب کہا جاتا ہے کہ خدا ٹھرے لئے دو ہزار سال پہلے مرا تو اس کے جواب میں PK دو سوال پوچھتا ہے. 
  • میں نے کیا کیا ؟
جواب: بائبل کی تعلیم یہ ہے کہ ہر وہ انسان جو آزاد  رکھتا ہے جب اُسے موقع دیا جائے تو وہ گناہ کا راستہ چنتا ہے یہ سلسلہ آدم سے شروع ہوا اور آج تک قائم ہے (رومیوں ٢٣:٣) ہاں البتہ یہ بات PK پر شاید فٹ نہ ہو کیونکہ وہ ایک خلائی مخلوق ہے!
  • میں تو ابھی آیا.؟  
جواب: یہ سوال واجب ہے کہ جو لوگ آج پیدا ہوئے ہیں اُن کے لئے ٢ ہزار سال پرانے کفارے کی کیا اہمیت ہے؟ یہاں مسلہ آتا ہے کفایت الکفارہ کا. دوسرے مذاہب میں قربانی، ایک نہ ختم ہونے والا سلسلہ ہے جبکہ ہمارا ایمان یہ ہے کہ مسیح کا ایک کفارہ تمام زمانوں کے تمام لوگوں کی نجات کے لئے کافی ہے. (عبرانیوں ١٠ باب)
  • مسیحیت کا ٹھپہ کہاں ہے؟
ہندوستان کئی مذاہب ہیں اور PK یہ دیکھتا ہے کہ زیادہ تر افراد اُسی دین کے پیروکار بنتے ہیں جو اُن کے آباؤاجداد کا ہوتا ہے. لہٰذا اُس بچہرکی منطق میں یہ بات آتی ہے کہ یقیقنا ہر نومولود بچے کے جسم پر اس کے مذہب کا ٹھپہ ہوگا. لیکن یہ یہودیوں اور مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ بچہ اُس دین کو لےکر پیدا ہوتا ہے. ہمارا عقیدہ یہ ہے کہ چاہے اپ مسیحی خاندان میں پیدا ہوں جب تک اپ اپنی آزاد مرضی سے اپنے ایمان کا اقرار نہیں کرتے آپ مسیحی نہیں کہلاسکتے. اسے کہتے ہیں دوسری پیدائش. یا پھر مسیحی یسوع کو اپنا "شخصی نجات دہندہ" قبول کرنا.
  • مختلف کمپنیز کے مختلف خدا:-
PK اس نتیجے پر پہنچتا ہے کہ اس دھرتی پر ایک نہیں بلکہ کئی خدا ہیں اور ہر مذہب ایک مختلف کمپنی کی طرح ہے جس کے گاہک دوسری کمپنی کا سودا نہیں خریدتے.یہ بات درست ہے. دنیا کے  مذہب ایسے نہیں ہیں جو اپس میں باہم اتفاق رکھتے ہیں.جو اس بات سے انکار کرتا ہے وہ حقئقت سے نابلد ہے.
اس میں کوئی شک نہیں کے بائبل مسیح کی لاثانیت کا درس دیتی ہے (اعمال ١٢:٤+یوحنا ٦:١٤) لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ تمام غیر مسیحی جہنم کے رہائشی ہیں بائبل اس بات کو تسلیم کرتی ہے کہ چرچ کی حدود کے باہر بھی ایسے 
لوگ ہیں جو خدا کی بادشاہی کے فرزند ہیں. (مرقس ٣٨:٩ تا ٤١)

".... to engage in Christian Evangelism does not mean that outside 
Church we consider God inactive and truth absent. Not at all. God sustains all his creatures, and therefore 'is not far from any of them'. By creation they are his 'offspring', 'who live and move and have their being' in him (Acts 17:27f .) also Jesus Christ, as the logos of God and the light of men, is him self ceaselessly active in the world. Because He is 'the true light coming into the world and giving light to every men' (john 1:9), we dare to claim that all beauty, truth and goodness,wherever they are found among human beings, derive from him. this is an aspect of God's 'common grace', his love shown to all humankind, it is not however, 'saving grace' which is given only to those who humbly cry to him for mercy. practice of evangelism does not mean that we think that there is no hope of salvation for those who have never heard of Jesus...." (John Stott, The Authentic Jesus pg. 80)

بپتسمہ :-
آخرکار PK یہ فیصلہ کرتا ہے کہ مجھے ہر مذہب کی پیروی کرنی چاہیے اور اسی سلسلے میں وہ چرچ میں بپتسمہ لیتا ہے. بپتسمہ دینِ مسیحیت میں شمولیت کا ایک لازمی جُز ہے لیکن یہ یاد رہے کہ محض غوطے لینے سے آپکو نجات نھ ملتی. نجات صرف مسیح پر ایمان لانے سے ملتی ہے. (اعمال ٣١:١٦) بپتسمہ اُس ایمان کا ظاہری اقرار ہے جو آپ جماعت المومنین کے سامنے کرتے ہیں لیکن یہ یاد رہے کہ جہاں اس بات پر اتفاق ہے کہ بپتسمہ مسیحیت میں شمولیت کے لئے لازمی  ہے مختلف کلیسیائیں اپنے اپنے منفرد انداز میں اس رسم کو ادا کرتی ہیں.



Join this blog to get free updates by email. Also LIKE my Facebook page to get all the latest blog posts on your social media.

Saturday, 11 April 2015

موجودہ دور میں مسیحیت کی مناسبت (Faith in action)

موجودہ دور میں مسیحیت کی مناسبت 
ایمان کا عملی مظاہرہ (Faith in action)



گزشتہ لیکچرز میں آپ نے سیکھا کہ بائبل ایک الہامی  ہے اس میں اندرونی ہم آہنگی ہے اور پیشگوئیاں ہیں ہم نے یہ بھی سیکھا کہ بائبل وہ اصول بیان کرتی ہے جس سے ہم اپنی زندگی بسر کرسکتے ہیں لیکن کیا بائبل کا انسانی تاریخ پر بھی کوئی اثر ہے اگر ہے تو وہ آج کے لیے بھی مناسب ہے ورنہ اس قدیم کتاب کو ہمیں ترک کردینا چاہیے.آیئے اس سلسلے میں چند تاریخی حقائق پر نظر ڈالتے ہیں.
دنیا میں سب سے پہلی شائح ہونے والی کتاب بائبل ہے غالباً ١٤٥٠ میں جوہانز گونبرگ نے پرنٹنگ پریس ایجاد کی اور یہ کوئی اتفاق نہیں کہ اس میں پہلی چھپنے والی کتاب بائبل مقدس تھی اہم بات یہ ہے اگر پرنٹنگ پریس ایجاد نہ ہوتی تو علوم چاہے سائنس کا ہو یا ادب کا فروغ نہیں پاتا. تو بائبل کی تشیہر نے دور حاضر میں علم کا آغاز کیا.

  • بائبل آج بھی دنیا میں سب سے زیادہ چھپنے والی، بکنے والی اور پڑھی جانے والی کتاب ہے جبکہ دنیا کی اکثریت مسیحی نہیں ہےاس کی ایک بہت بڑی وجہ بائبل کے تراجم ہیں.

  • ١٩٩٨ کے اعدادوشمار کے مطابق بائبل کا ٢ ہزار سے زائد زبانوں میں ترجمہ ہوچکا ہے یعنی دنیا کے ٩٣ فیصد لوگ بائبل کو اپنی مادری زبان میں پڑھتے ہیں.

  • بائبل کا انگریزی زبان میں سب سے مشہور ترجمہ یعنی کنگ جیمز ورجن  بھلے کسی اور زبان سے مترجم ہے، اس نے انگریزی زبان کے ارتقاء میں نمایاں کردار ادا کیا ہے کم و بیش ساٹھ فیصد انگریزی محاورے کنگ جیمز ورجن سے آتے ہیں.

  • عام تاثر یہ ہے کہ مسیحیت سائنس کے خلاف سرگرم رہی ہے لیکن کیا یہ محض اتفاق ہے کہ آج وہ افراد جن کو جدید سائنس کا بانی کہا جاتا ہے وہ سب بائبل پر ایمان رکھتے تھے؟ مثال کے طور پر- آئزک نیوٹن، گلیلیو، کوپرنیکس.
 
  • مسیحی حضرات نے کھیلوں کی دنیا میں بھی نمایاں کردار ادا کیا ہے. المپک گولدمڈلیسٹ ایرک لڈن ایک اسکوٹش مشنری تھے اور ریسلنگ چیمپئن شان مائیکل امریکہ میں اپنا بائبل اسکول چلاتے تھے.

  • مسیحی عبادتی موسیقی نے مغربی کلاسیکل موسیقی پر اپنا گہرا اثر چھوڑا ہے اور موجودہ دور کا سب سے ممتاز میوزک گروپ U2 بھی چار مسیحی حضرات پر مشتمل ہے.



  • موجودہ نرسنگ اور ہیلتھ کیئر بھی مسیحیوں کا تحفہ ہے جس میں سب سے مشہور نام فلورنس نیٹینگل کا ہے.

  • اکثر اعترض کیا جاتا ہے کہ مغرب میں سیاہ فام غلاموں کی تجارت کو مذہبی سرپرستی حاصل تھی. لیکن شاید لوگ یہ نہیں جانتے کہ اس  گناہوں کے عمل کو روکنے والا ولیم ولبر فورسنامی ایک مبشرِ انجیل تھا. (اگر آپ پڑھنا چاہتے ہیں کہ بائبل غلاموں اور سیاہ فام لوگوں کے بارے میں کیا سیکھاتی ہے تو پڑھئیے اعمال ٢٦:٨تا ٤٠ آیت تک. اور فلیموں ١٠ تا ١٦ آیت.)

  • تیسری دنیا میں تعلیم اور ہیلتھ کرے پر جتنا مشنریوں نے کام کیا ہے شاید ہی وہاں کی مقامی حکومتوں نے بھی کبھی کیا ہو. مغرب کے اندر بھی سب سے مایاں ناز تعلیمی ادارے جیسے آکسفورڈ اور ہارورڈ بائبل کی تعلیم کے لئے  قائم کے گئے ہیں.

  • مسیح نے کہا تھا کہ تم زمین کے نمک ہو.لیکن مسیحیوں نے اس زمین کے باہر بھی اپنے ایمان کابرملا اظہار کیا ہے.8-Apollo جوکہ امریکہ کا ایک خلائی مشن تھا چاند پر جانے کے لئے انہوں نے ٢٥ دسمبر ١٩٦٨ میں خلاء سے ایک ویڈیو میسج بھیجا جس میں انہوں نے پیدائش کی کتاب کی تلاوت کی تھی.

ان سب باتوں کا یہ مطلب نہیں کہ دوسرے مذاہب کے لوگوں نے بنی نوع انسان کی ترقی میں کوئی حصّہ نہیں ڈالا نہ ہی ہم یہ کہہ رہے ہیں کے مسیحیوں نے کبھی کچھ غلط نہیں کیا لیکن غور طلب بات یہ ہے کے جب بھی مسیح کے نام پر ظلم ہوا ہے تو اسے روکنے والے بھی مسیحی حضرات ہی تھے تو چاہے وہ صلیبی جنگیں ہوں یا غلاموں کی تجارت.اسی وجہ سے بائبل اکیسویں صدی میں بھی اپنی اہمیت قائم رکھے ہوئے ہے. 

"مسیحیت انسانیت کے لئے ایک تحفے کی حیثیت رکھتی ہے اور نسلِ انسانی کے لئے رحمت سے کم نہیں ہے.ایسے افراد جو ظاہری مسیحی معاشروں میں رہتے ہیں جہاں مسیحی اخلاقیات رائج ہیں اُن کی اکثریت اس بات سے ناواقف ہے کہ یسوع ناصری کے کتنے مقروض ہیں اس دنیا میں جتنی بھی اچھائی اور رحمت ہے اس کا بڑا حصّہ یسوع سے آیا ہے."ڈی جیمز کینیڈی 

  

Friday, 10 April 2015

Tawhid or Trinity?: Shabir Ally vs. Nabeel Qureshi Debate Review

I am taking this opportunity to present a review of the great debate that took place two days ago between Shabir Ally (scholar of Qur'anic Exegesis) and Nabeel Qureshi (Christian Apologist), organized by the Ravi Zacharias International Ministries (RZIM).




The topic of the debate was an important one: Trinity or Tawheed? i.e. which concept of God, the Christian or Muslim, is more coherent. 

Now this certainly not a new topic and Christians and Muslims have been debating for quiet a while. Shabir Ally, as Nabeel respectfully noted, has been engaged in debates with Christians for over decades. I have seen his debate videos going back as early as 1995 with people like Robert Morey and Jay Smith, but perhaps his best debates have been with Dr. James White in the last decade (all of these videos are available on YouTube).

But there were couple of unique things about this debate. For one thing, this is the only religious debate I know of that has been organized by Ravi Zacharias' fruitful ministry. Ravi himself has extensive experience of engaging with the religions of the world and has spoken widely on comparative religion. In fact, he is one scholar that has popularized Christian apologetics and his work is comparable to the likes of Josh McDowell and Dr. William Lane Craig.




I highly recommend his book 'Jesus Among Other Gods' to anyone who wants to learn about the uniqueness of Christianity. 


However, the more important distinction of this debate as compared to others that you find online is the way the Christian side compelled Muslims to rethink their criticisms of Christianity in the light of their own faith.

Dr. James White of the Alpha and Omega Ministries was the first one to actually challenge Shabir Ally (who is the greatest Muslim debater in the world today) in his methodology; how do you consistently use any argument to support Islam and refute Christianity? The question hasn't been answered as yet, and this debate further demonstrated the fact.

You see, Nabeel Qureshi didn't just make a generic presentation on the Trinity. He actually drew parallels with the Islamic concept of God, which Muslims boast is the purest form of monotheism.

Nabeel Qureshi was right in noting that while Muslims preach that the word Trinity is not found in the Bible, that it developed over history of the Church, and that Christianity is still divided over it, they conveniently ignore the fact that the concept of Tawheed is not that straightforward as well.

The word Tawheed is also missing from the Islamic scriptures, this concept also developed over the centuries of Islamic history, and there were sharp disputes (and even deaths) over the different debates on the concept of Tawheed.


In my view, the most crucial point was that in Islam, there is a debate whether the Holy Qur'an is created or uncreated. If it is uncreated, does it mean there is another eternal object other than Allah Himself? And if yes, then why do Muslims object to the Word being eternal with God as John 1:1 teaches.

Moreover, if the Holy Qur'an is with Allah since eternity and we also have physical copies of the book on this earth, then doesn't this mean that the Islamic Scriptures have both a physical and divine nature? If yes, then on what consistent basis to Muslims reject the Hypostatic Union?

Shabir Ally, in my view, dodged these questions and tried to present a redactionist view of Church history, i.e. how the concept of Trinity developed, the word "developed" obviously having negative connotations.

I will conclude by saying that Muslims who watch this debate will come to realize that the concept of One God without any persons is not that simple as they have been taught. As the Christian debater said: 'God is beyond our comprehension, for He created it'

Read my article on the Trinity here. God Bless You.


Thursday, 9 April 2015

صحت کتب مقدسہ:اندرونی شواہد Authenticity of the Bible-Urdu

ویسے تو بائبل کے دعووں کو دیکھنا یا کسی بھی کتاب کے بارے میں دعوے بذات خود کچھ ثابت نہیں کرتے.لیکن   اگر ایک کتاب خود الہامی ہونے کا دعوی نہیں کرتی  تو اسے الہامی ماننے کا کوئی جواز باقی  نہیں رہتا.دنیا کے کیں مذاھب کی مقدس کتا بوں میں ان کے آپ الہامی ہونے کا دعوی ہے. دیکھنا یہ ہے کے بائبل بھی اس طرح کے کوئی بات اپنے بارے میں کرتی ہے یا نہیں.

الہام کے معنی :-
٢-تیمتھیس ٣:١٦-ہمیں بتاتی ہے کے  صحائف خدا سے ہیں بلکہ یونانی متن کے مطابق خدا کی سانس(Theopnuestos)سےہے  لیکن  اس ساتھ .٢ پطرس ١:٢١ -ہمیں بتاتی ہے کے اسے مقدس آدمیوں نے لکھا یعنی بائبل کی ہر کتاب دو مصنفوں سے آتی ہے :خدا خوداور اس کتاب کے مصنف مجازی .

بائبل کے دعوے :-
  • یسعیاہ ،یرمیاہ ، حزقی ایل ، ملاکی، یا کوئی بھی نبی اپنی کتاب اس بات سے شروع کرتا ہے کے اسے خدا نے ایک پیغام دیا، یا خدا کا کلام اس کی طرف آیا. "خداوند فرماتا ہے" یہ فقرہ بیسیوں نہیں بلکہ  سینکڈوں دفعہ پرانے عہدنامےکے سفہوں پر ملتا ہے. اسی طرح نیۓ عہدنامہ میں بھی رسولوں نے اس بات کا دعوی کیا ہے کہ جو وہ لکھ رہے ہیں درحقیقت خدا کا کلام ہے.١تھسلنیکیوں٢:١٣

  • نہ صرف مصنف اپنی کتابوں کے بارے میں اس طرح کے دعوے کرتے ہیں بلکہ انبیاء اور رسول ایک دوسرے کی کتابوں کی  الہامی حیثیت کو تسلیم کرتے ہیں.(دانی ایل ٢:٩. پطرس ٤:٢تا ١٨ بمقابل یہودہ کا خط ٤ تا ١٨)

  • لیکن سب سے بڑی شہادت ہمیں مسیح کے اپنے ہونٹوں سے ملتی ہے متی ١٤:١٣ میں وہ یسعیاہ کا ذکر کرتے ہیں. متی ٤٣:٢٢میں زبور کا ذکر ہے متی میں ١٥:٢٤میں دانی ایل کا، حتی کے اپنے پہاڑی واعظ میں انہوں نے تمام انبیاء کی کتابوں کو الہامی اور لاتبدیل قرار دیا. غور طلب بات یہ ہے کہ یہی دعوی وہ آگے جاکے اپنے منہ کی باتوں کی بابت کرتا ہے   بحوالہ متی ٣٥:٢٤. یہاں تک کے مسیح نے جب دوسرے مددگار کی پیش گوئی کرتے وقت یہ واضح کیا کے وہ آکر شاگردوں کوتمام باتیں  دلاۓ گا. اس طرح مسیح نے نیۓ عہدنامے کی بنیاد ڈالی.  

 چند اعترضات اورانکے جوابات:


  • موسیٰ نے توریت نہیں لکھی (کیونکہ استثنا ٥:٣٤.میں اُن کی اپنی رحلت کا ذکر ہے)

ج:- یہ کتاب یشوع نے مکمل کی اس کا ثبوت ہمیں دو آیتوں سے ملتا ہے.یشوع ٦:٢٣+٢٦:٢٤. لیکن یشوع کی کتاب میں اس کی اپنی رحلت کا ذکر ہے.تو پھر یہاں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ یہ کتاب کس نے مکمل کی؟ ہم  نہیں جانتے(شاید اسرائیل  کے  بزرگوں نے -٣١ آیت ) لیکن ہمارے نزدیک یہ روایت تو واضح ہے کے ایک نبی کی کتاب دوسرا نبی مکمل کر سکتا ہے. اور رہی بات استثنا کی کتاب تو مسیح نے شیطان کے سامنے تین دفعہ اس کا حوالہ دے کر اور ان گنت دفعہ اسے موسیٰ کی شریعت کہہ کر (مرقس ١٠.....) اس کتاب کو ہر شک و شبہ سے بالاتر کردیا ہے.

  • یسعیاہ ایک سے زیادہ  مصنفوں نے لکھی  

ج:- مسیح نے لوقا ١٨:٤تا ٩ اور متی ١٤:١٣ میں یسعیاہ کے دوحصّوں سے حوالہ دیا ہے جن کو اکثر ناقدین کہتے ہیں کہ یہ فرق فرق مصنفوں کی کاوش ہے لیکن مسیح نے دونوں دفعہ یسعیاہ کے نام سے حوالاجات کا ریفرنس دیا.

  • ٢-پطرس- پطرس رسول نے نہیں لکھا- ناقدین یہ کہتے ہیں کہ پہلے اور دوسرے پطرس میں طرزتحریر کا اختلاف پایا جاتا ہے لہٰذا یہ ایک شخص کی کاوش نہیں.       
   ج:- ١-پطرس١٢:٥ میں وہ یعنی پطرس یہ اشارہ کرتے ہیں کہ یہ خط میں نے سلوانس کی مدد سے لکھا ہے اس سے طرزتحریر کے اختلافات پر کچھ روشنی پڑتی ہے .


کتاب مقدس کی لاثانیت و حقانیت  
اب تک ہم نے بائبل کے دعوؤں کا ایک سرسری جائزہ لیا ہے اور چند اعتراضات کا مختصراً جواب دیا ہے. لیکن اب ہم کچھ ایسے نکات پیش کرنے جارہے ہیں. جس سے بائبل کا الہامی ہونا ناسہی لیکن کم سے کم اس کی لاثانیت ثابت ہوتی ہیں.
  • اندرونی ہم آہنگی :-
  بائبل تقریباً چھ درجن کتابوں کا مجوعہ ہے جو کہ مختلف زمانوں، زبانوں اور مختلف جغرائیائی مقامات پر محیط ہے لیکن اس کی ہم آہنگی پڑھنے والوں کو دنگ کردیتی ہے.


-پیدائش١:١آسمان اور زمین کا قائم ہونا  بمقابل مقاشفہ ١:٢١- ایک نیازمین اور آسمان 
   
 - پیدائش١٨:٣- زمین لعنتی ٹھہری مقاشفہ ٣:٢٢ لعنت اٹھ گئی 

 - پیدائش٨:١١- تمام قوموں کا منتشر ہونا مقاشفہ٩:٧تا١٠-ہر قوم ہر قبیلے ہر زبان کے لوگ  خدا کی بادشاہی میں داخل

 یعنی بائبل کو آپ پہلی کتاب کی پہلی آیت سے شروع کریں یا آخری کتاب کی آخری آیت سےالٹا پڑھنا شروع کریں، آپ کو ایک تسلسل نظر آے گا.  ایک اور مثال :                                                                                                                   ١)خروج ٦:٢٤ تا ٧- پہلا عہد برہ کےخون سے باندھا گیا.            
 ٢)احبار١١:١٧-خون سے ہی نجات ہے
٣)یرمیاہ٣١:٣١-ایکنئ عہدکا ذکر ہے جس میں گناہ کی معافی ہے                        = متی ٢٧:٢٦تا ٢٩میں نیا عہد،خون اور گناہ کی معافی مسیح پر مکمل ہوتی ہے-



نبوتیں:-
-پیدائش ١٥:٣- اچھائی اور برائی کی ابدی جنگ کا ذکر ہے لیکن بظاھر ایک  فردواحد کا بھی ذکر ملتا ہے جوکہ جنگ کو خاتمہ تک لے کر جائے گا

-پیدائش  ٣:١٢-یہ ابرہام کی نسل میں سے ہوگا-  

-پیدائش ٢١:١٧- ابرہام کے بیٹے اضحاق سے ہوگا

-پیدائش ١٠:٤٩- یعقوب کے بیٹے یہوداہ سے            

-٢سموئیل ١٤:٧- داؤد کی نسل میں سے

-میکاہ ٢:٥-بیت لحم میں پیدا ہوگا-                           

متی رسول کل دوآیتوں میں اس پوری لڑی کا نتیجہ ہمیں دیتے ہیں .متی ١:١ میں کہ وہ داؤد اور ابرہام کی نسل میں سے ہے اور متی ٥:٢ میں وہ بیت لحم میں پیدا ہوا- مسیح گدھے پر سوار ہوکر "زبردستی" زکریاہ کی نبوت پوری کرسکتے ہیں لیکن کوئی بھی شخص اپنا شجرہ نسب اور جائے پیدائش مقرر نہیں کرسکتا !!!

دانی ایل ٢باب اور ٧ باب میں ایک مجسمے اور ایک جاندار کا ذکر ہے. ان دونوں چیزوں کو چار حصّوں میں تقسیم کیا گیا ہے. مجسمہ سونے چاندی پیتل اور لوہے سے بنا ہے جاندار مختلف جانوروں کی مانند ہے. دانی ایل ٢١:٨ ہمیں بتاتی ہے کہ یہ چار بادشاہتوں کا ذکر ہے جو یکایک ایک دوسرے کو ڈھائیں گی دانی ایل خود بابل کی بادشاہت میں تھا اور اس نے فارس کی فتح بھی اپنی آنکھوں سے دیکھی تھی لیکن ان کو یونان اور روم کی حکومت کی آگاہی کیسے ہوئی ؟ اور ١٤:٧ میں وہ ابن آدم یعنی مسیح کا ذکر کرتے ہیں جوکہ سلطنت روم کے وقت جلوہ گر ہوئے. اب اپ بتائیے کہ کیا کبھی کسی نبی جوتش یا عالم نے اتنی باریکی سے مستقبل کا حال بتایا ہو؟؟

اس مختصرسبق کو ختم کرنے سے پہلے ہم اس سوال کا جواب دینا چاھیں گے "بائبل کلیسیإ نے دنیا کو دی (یعنی اپنی مرضی سے بائبل کی کتابوں کا انتخاب کیا) یا بائبل نے کلیسیإ کو جنم دیا ؟"

یہ ایک ناختم ہونے والی بحث ہے. آپ ہمیں بتایے کہ  کراچی  کے علاقے صدر میں رش اس لئے لگتا ہے کہ وہ ایک اچھا بازار ہے یا رش لگنےکی وجہ سے وہ  ایک اچھا بازار کہلاتا ہے ؟

لیکن اپ یہ دیکھیں کے کتابوں کا انتخاب کلیسیإ میں شروع سے ہی ہوگیا تھا نہ کہ قسطنطیں (Constantine) کے زمانے میں-١-تیم١٨:٥ حضرت پولوس- متی اور لوقا سے حوالہ دے کر کہتے ہیں کتاب مقدس میں لکھا ہے اور ٢-پطرس ١٥:٣ اور ١٦ میں حضرت پولوس رسول کے خطوط کو وہی درجہ دیا گیا ہے جو عہد عتیق کا ہے. لیکن ہمارے لئے معیار مسیح ہیں. یوحنا ١٤:١٠ میں اپ نے فرمایا کہ میری بھیڑیں میری آواز پہچانتی ہیں کلیسیإ نے عہد نامہ جدید کی ستایئس کتابوں میں اپنے چرواہے کی آواز کو پہچانا اس لیے وہ بائبل کا حصّہ ہیں. خدا کی کسم ہم نے دنیا میں اور کوئی کتاب نہیں  پڑھی جس میں ہمیں مسیح کی آواز آئی.




There was an error in this gadget